زیادہ تلاش کیے گئے الفاظ

محفوظ شدہ الفاظ

زیادہ تلاش کیے گئے الفاظ

لاچار

جس کے پاس چارۂ کار نہ ہو، بے بس، مجبور، ناچار

تَوازُن

(خیال یا دماغ وغیرہ کی) ہمواری، استواری

طُومار

طویل کہانی یا قصّہ (جو ناگوار ہو جائے) تحریروں یا بیانات کا بڑا مجموعہ

عالی

اونچا، بلند، برتر, معزز، قابل احترام (درجہ شان و شوکت، قدر و قیمت وغیرہ میں)، تعظیم کے واسطے جیسے: مزاج عالی

مُنصِف مِزاج

جس کی طبیعت میں انصاف ہو، عدل سے کام لینے والا

مِنَن

منتیں، احسانات، نیکیاں

پوشِیدَہ

مخفی، پنہاں، چھپا ہوا، خفیہ

فُرْقَت

دوری، جُدائی، علیحٰدگی، ہجر

غازِی

اللہ کی راہ میں کافروں سے جنگ کرنے والا، مردِ جنگ آزما، دشمنِ دین سے لڑنے والا مجاہد

فَرْدِ جُرْم

(قانون) مسل کا وہ کاغذ جس پر مجرم کا جرم اور دفعہ شہادت لینے کے بعد درج کی جائے

ہِجرَت

کسی علاقے شہر یا ملک کو چھوڑ دینا، وطن کو خیرباد کہنا، وطن کو چھوڑ کر کہیں اور چلا جانا، ترک وطن

مارگ

راستہ، راہ

مِرْگی کا دَورَہ

مرض مرگی کا حملہ

چَوبارا

مکان کے اوپر کا وہ کمرہ جس کے چار دروازے یا چاروں طرف کھڑکیاں ہوتی ہیں، کوٹھا، بالا خانہ، چومنزلہ عمارت

سَراب

وہ ریت یا تار کول جس پر دُھوپ میں دُور سے پانی کا دھوکا ہوتا ہے

حَرْفی

حرف سے متعلق، حرف والا، حرف سے منسلک

مَعْذَرَت

عذر، حیلہ، بہانہ، معافی، درگزر

نائِب قاصِد

قاصد کا مددگار، قاصد سے چھوٹا عہدہ دار، سرکاری ڈاک لے جانے والے ہرکارے کا معاون

مُخْتَصَر

خلاصہ کیا گیا، اختصار کیا گیا، جس میں طوالت نہ ہو، کم، تھوڑا، ذرا سا، چھوٹا، چھوٹے قد کا، جو لمبا نہ ہو

بیزار

متنفر، اکتایا ہوا، خفا، ناخوش

گَرْدَن پَر چُھری پھیرْنا

ذبح کرنا، گلا کاٹںا

سَن٘گِ ماہی

آبی جانوروں کے اس خاندان کو کہتے ہیں جِن کی پشت پتھر کی طرح سخت ہوتی ہے

مُسَلْسَل

متواتر، پیہم، لگاتار

عَہْدِ وَفا

وفاداری کا اقرار، وعدے کا پورا کرنا

تَرْک دُنْیا

دنیاداری اور عیش و عشرت سے منحرف ہونا، فقیری اختیار کرنا، خلوت گزینی، رہبانیت

سَفّاک

خوں ریز، قاتل، بے رحم، ظالم

سُبُک خِرام

تیزرو، برق رو، تیز رفتار، بہت تیرز چلنے والا

معیار

کسوٹی، محک، کھرا کھوٹا جانچنے کا پتھر، پرکھ یا جانچ پڑتال کا طریقہ

کِھسْیانی بِلّی کَھمْبا نوچے

جسے غصہ آرہا ہو وہ دوسروں پر اپنی جھلاہٹ اتارتا ہے، بےبسی میں آدمی دوسروں پر غصّہ اتارتا ہے

شَرِیکِ حَیات

زندگی کا رفیق یا ساتھی، مراد : عموماً بیوی یا شوہر

لَمْس

کسی چیز کو چُھو کر محسوس کرنے کی قوّت، وہ قوّت جس سے نرمی سختی اور سردی گرمی وغیرہ کو محسوس کیا جاتا ہے، قوّتِ لامسہ

اِخْتِیار

حکم چلانے کی اہلیت، کسی بات یا معاملے پر پورا پورا تصرف حاصل ہونے کی حیثیت، آئینی طورپر حل وعقد یا تصرف کا استحقاق، اقتدار حاکمیت

چَوکا چَڑھانا

مصنوعی دانْت منْھ میں لگانا

گَرْدِش

دَوَری حرکت، چکّر، دَور، پھیر، گھماؤ

فاش

ظاہر، آشکارا، صریح، کھلم کھلا، اعلانیہ

دُعا مُسْتَجاب ہونا

عرض و التجا کا قبول ہو جانا، مراد حاصل ہونا

مُستَجاب

جواب دیا گیا، مجازاً جسے قبول کیا جائے، جسے مان لیا جائے (عموماً دعا وغیرہ)

قُرْبَت

ظاہری یا معنوی نزدیکی نیز تقرب، رشتہ داری

طِفْلِ مَکْتَب

یَوم وِلادَت

پیدائش کا دن، سالگرہ کا دن، جنم دن

اَز سَرِ نَو

نئے سرے سے، دوبارہ، پھر سے

کَم ظَرْف

حوصلے اور ہمّت میں پست، کم حوصلہ

رُوْ پُوْش

منھ چھپائے ہوئے، مخفی، پوشیدہ

زُود پَشیمان

اپنے کسی نامناسب طرزعمل یا کسی ناروا بات پر جلد پچھتانے والا، اپنی غلطی یا خطا پر جلد شرمندہ ہونے والا

دَسْتْرَس

رسائی، پہنچ

پولَج

وہ اراضی جس پر ہر سال کھیتی کی جاتی ہے

شِدَّت

زور، زیادتی، کثرت، افراط

مُشْتِ خاک

(لفظاً) مٹھی بھر خاک، خاک کی مٹھی، خاک کی چٹکی

اَذِیَّت

جسمانی تکلیف، دکھ

صِنْف

جنس

فاسِق

حسن و فلاح کے راستے سے منحرف ہو جانے والا، گنہ گار، بدکار، جھوٹھا، حرام کار، بے ایمان

عُہْدے

منصب، مرتبہ، حکومت

مُنافِق

جو ظاہر میں دوست باطن میں دشمن ہو، جو دھوکا دینے کے لیے ظاہراً ایمان لایا ہو، دل میں کینہ رکھنے والا، ریاکار، مکّار

مُطْمَئِن

اطمینان پانے یا رکھنے والا، بے فکر، آسودہ

اُرْدُو

ریختہ، ہندوی

صِنْفِ سُخَن

نوع شاعری کی قسم

آہَن

لوہا، فولاد

جانِ مَن

(لغوی) میری جان یعنی عزیز‘ پیارے

مَطْلَب

مفہوم، مضمون، معنی، مدعا

عَہْد

وقت، زمانہ، دور

غِذائے ثَقِیل

کھانا جو دیر ہضم ہو، دیر ہضم غذا

غَرْق

ڈوبنا، پانی کا سر سے گزر جانا

ہَم عَہْد

ہم عصر، ہم زمانہ، ایک زمانے کا، جو ایک ہی عہد میں حیات ہوں

عَہْدِ حُکُومَت

حکومت کا زمانہ، دورِ حکومت، حکمرانی کا زمانہ، ایّام حکومت

عَہْدِ نَو

نیا زمانہ، عصرِ حاضر، موجودہ تہذیب کا دور

تَجْدِید

نیا کرنے کا عمل، نئے سرے سے کوئی کام کرنے کی حالت

خود ساخْتَہ

خود بنایا ہوا، اپنے طور پر دعویدار، اپنے من سے گھڑا ہوا، من گھڑت

قَناعَت

تھوڑی چیز پر رضا مندی، جو کچھ مل جائے اس پر صبر کرلینے کی خُو

غَیر مُہَذَّب

بد تہذیب، جس میں تہذیب و اخلاق نہ ہو، تہذیب و تمدن سے ناواقف، ناشائستہ، غیرمتمدن

رَقْص

اصول نغمی یا فطری امنگ اور جوشِ مسرت میں تھرکنے اور ناچنے کا عمل یا کیفیت، ناچ، ناچنا

عُمْرِ دَراز

لمبی عمر، طویل زندگی

تَذْلِیل

رسوائی، ذلت، تحقیر، خوار کرنا

قَولِ فَیصَل

فیصلہ کن بات، قطعی اور آخری بات، حکم ناطق

زُلْفِ دَراز

لمبے گیسو، لمبے بال

سَرزَنِش

بُرا بھلا کہنا، تنبیہ، ملامت، ڈانٹ ڈپٹ

ثَقافَت

کسی بھی ملک یا علاقے کے خاص طور طریقے اور رسم و رواج وغیرہ، کسی قوم یا گروہ انسانی کی تہذیب کے اعلیٰ مظاہر جو اس کے مذہب نظام اخلاق علم و ادب اور فنون میں نظر آتے ہیں، تہذیب، کلچر

عَوامُ النّاس

تمام لوگ، عام لوگ، عام آدمی

آئِین

قانون، ضابطہ، دستور العمل، شرع، شاستر

زِنا بِالْجَبْر

کسی عورت سے زبردستی بدکاری کرنے کا عمل، کسی کے ساتھ زبردستی زنا کرنے کا عمل

اِعْتِماد

تکیہ، بھروسہ، یقین، اعتبار، ساکھ، مان

اِعْتِبار

یقین، اعتماد، بھروسہ، تکیہ،

بادِ صَبا

صبح کے وقت قبل طلوع شمال مشرق سے چلنے والی ہوا جو صحت بخش و خوش گوار ہوتی ہے، نسیم سحر، پروا ہوا

رَشْک

کسی کی خوبی یا خوش بختی دیکھ کر یہ خیال کرنا کہ ہمیں بھی یہ خوبی یا خوش بختی حاصل ہو جائے (لیکن اس کے پاس بھی رہے)، کسی کی دولت پر اس کے زوال کے بغیر کی جانے والی خواہش، یہ آرزو کہ جو دوسرے کو حاصل ہے مجھے بھی مل جائے، غبطہ

عَلامَتِ بُلُوْغْ

جوانی کی نشانی، جیسے: مونچھوں کا نکلنا وغیرہ

قَوْمِی سَلامَتِی

ملک کی حفاظت، یا اس کے دفاع میں اٹھائے گئے اقدامات

زِیسْت

زندگی، حیات

عَزْمِ سَفَر

کوچ کا قصد، سفر کی نیت کرنا، سفر کا ارادہ

رَقِیب

نگہبان، محافظ، پاسبان، دربان، رکھوالا، نگراں

اَلْفاظ

(متعدد) لفظ، بامعنی آوازیں جو بولی اور لکھی جائیں، کلمات

قِلَّت

كمی (خواہ مقدار میں ہو یا كیفیت میں) (كثرت كا نقیض)

اَمْوات

موت اور میّت کی جمع، وفات، مرنا

تَغافُل

دانستہ غفلت، بالارادہ برتی ہوئی بے التفاتی

فِراق

جُدائی، ہجر، فرقت

بَد نَصیب

جس کی قسمت میں تکلیف اور رنج ہو، مصیبت زدہ

عَدُو

حريف، خصم ، دشمن، بدخواه

اَنْجُم

ستارے، تارے، کواکب، نجوم

عَدْل

انصاف ، دار گُستری

چِلْمَن

تیلیوں کا بنا ہوا پردہ جو عام طور پر گھروں اور گاڑیوں کے دروازوں اور دریچوں پر ڈالا جاتا ہے تا کہ باہر والوں کو اندر کی کوئی چیز نظر نہ آئے، ایک طرح کی چق، چک

دِفاع

روکنے دُور کرنے یا ہٹانے کا عمل یا کیفیت، حفاظت، بچاؤ

اُلْفَت

چاہت، انس، محبت

رَنْجِش

کشیدگی، خفگی، آزردگی، ناخوشی، کدورت

سَماعَت

۳. حاکم کا کسی مقدمے کی کارروائی سُننا ، مقدمہ زیر سماعت ہونا.

دِل آزاری

دل دُکھانے کا عمل، ظلم و ستم، ایذا رسانی

تَوہِینِ عَدالَت

(قانون) کوئی ایسا لفظ کہہ دینا یا ایسا کام کرنا جس سے عدالت کی تحقیر پائی جاتی ہو، عدالت کی ہتک، عدالت کی بے توقیری، عدالت کی تحقیر

مَنصُوبَہ

وہ کام جس کا ارادہ کیا گیا ہو، مقصود و منشا، کوئی اہم کام جس کا خیال یا تدبیر ذہن یا کاغذ وغیرہ میں محفوظ ہو، منشائے دل، مقصد، ارادہ، تدبیر، جوڑ توڑ

عَداوَت

دشمنی، بغض، عناد، خُصُومَت، مخالفت، معادنت، اختلاف

عَزْم

ارادہ، قصد، نیت

شَب

غروبِ آفتاب سے صبح تک كاوقت

آفْتاب

سورج، شمس

Home / Blog / From Script Sounds to Sound Script: A Fresh Take on Learning Urdu

From Script Sounds to Sound Script: A Fresh Take on Learning Urdu

by Rajat Kumar 12 December 2021 3 min Read

From Script Sounds to Sound Script: A Fresh Take on Learning Urdu

phir nazar me.n phuul mahke dil me.n phir sham.e.n jalii.n
phir tasavvur ne liyaa us bazm me.n jaane kaa naam
FAIZ AHMAD FAIZ

This verse above by Faiz Sahab is inarguably among the most adored couplets of Urdu language.

But besides its evocative imagery and nostalgic vibe, do you know what’s the secret behind Ghazal-lovers reciting it over and over, like a cryptic Mantra?

It’s rich, resonant sound effects.

If you know a thing or two about prosody and know how to recite a She’r in tune with its metrical pulse, you know once you recite this verse you’d be stuck in an endless loop!

I know this is one of the most popular meters and there are countless Urdu Ghazals in it, but what is it that particularly stimulates the flow of sounds in this couplet of Faiz?

It’s the repetitive ‘Ph’ sound in the verse.

Especially, with the ‘Phir’ and ‘Phuul’, and again the ‘Phir’ in the second hemistich.

The ‘Ph’ falls exactly on the first beat of a rhythmic time-signature; say, the ‘Sam’ of a 4/4 taal or Rupak Taal, or precisely, the ‘Dhaa’ of the Tabla.

It’s as if the aspirated, blown-out sound of ‘Ph’ lifts the verse to a crescendo at every beat drop:

Phir - na- zar- mein / Phuu - l -mah - ke / dil -me -phir - Sham / en-ja-lii.n
Dam-da-Dam-Dam/ Dam-da-Dam-Dam/ Dam-da-Dam-Dam/ Dam-da-Dam

Kind of cool, no?

But wait, now try something else, replace the imposing ‘Ph’ sound, with the faint ‘f’, now recite the verse.

Notice the difference; not that sonorous at all, right?

What’s happened is that the ‘f’ has literally taken the air out of the verse.

Sadly, or else, this is how most modern-day Urdu poetry aficionados-cum-aspirants read and recite this verse, with the syllable ‘f’.

Though it's common knowledge why this has come to pass – the fact that readers of the Urdu script have skimmed and Devanagari has dropped the all-essential Nuqtas or dots that helped readers tell apart these different syllables – it’s not the Hindi or Urdu speaker who stands at a loss, but it’s that Hindustani speaker, who is positive that Urdu/Hindi is just one language and his OWN, who has further distanced from his Lingua Franca.

And this has surely not been helped by counterproductive arguments such as, ‘So what if Devanagari has dropped Nuqtas, Urdu texts are also barely marked with diacritics (E’raab) which make identifying vowels harder; eventually, people know what they’re talking about!’

The truth is, people don’t. 

If you take sensible reading out of the equation, speaking sense makes no sense.

And yes, this forced rigidity upon the two scripts is being broken by Aamozish and the likes, yet for us modern learners and speakers, who are flushed upon with Roman texts from all sides, we need to embrace, or perhaps even invent, a Sound Script, a script that speaks for itself, a script that makes not just advertisements or slogans meaningful, but also poetry of Faiz and other greats more relatable.

Language has more to do than just communicating a meaning, it has to fulfil the purpose of successfully conveying an idea; for an idea is exceedingly Virgin than its meaning.

Wow! We have quickly digressed from relishing a beautiful couplet into a heart-out rant. Perhaps now is the perfect time to take cue from Faiz Sahab’s ‘phir tasavvur ne liyaa us bazm me.n jaane kaa naam’, and step into ‘’that gathering’’ where we can again touch base with our roots, and can know more and unlearn even more!

Oh, and if this ‘Ph’ vs ‘f’ friction still subsides, then we only have Ghalib to turn to:

aagahii daam-e-shuniidan jis qadar chaahe bichhaa.e
mudda.aa anqaa hai apne aalam-e-taqriir kaa
MIRZA GHALIB

Delete 44 saved words?

کیا آپ واقعی ان اندراجات کو حذف کر رہے ہیں؟ انہیں واپس لانا ناممکن ہوگا۔